بلوچ دشمنی کی آڑ میں مکمل طور پر حواس باختہ ہوکر جنازہ روکا گیا جسکی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔انفارمیشن سکیرٹری بی ایس او ناصر بلوچ

Spread the love

بلوچ دشمنی کی آڑ میں مکمل طور پر حواس باختہ ہوکر جنازہ روکا گیا جسکی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔انفارمیشن سکیرٹری بی ایس او ناصر بلوچ

بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن کے مرکزی انفارمیشن سیکرٹری ناصر بلوچ نے جاری کردہ بیان میں کریمہ بلوچ کی نماز جنازہ کے لیے کراچی میں اجازت نہ دینے اور انکی جسد خاکی کو لواحقین کے مرضی کے بغیر تربت منتقلی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہے۔
انہوں نے کہا کہ شہید نواب اکبر خان بگٹی کو جسطرح شہید کرکے نماز جنازہ کی اجازت نہیں دی گئی اب یہی رویہ ایک بلوچ خاتون کے ساتھ کی روا رکھا گیا اسطرح کے منفی ہتکنڈے غیر اسلامی اور غیر انسانی اور بلوچ دشمن اقدامات ہیں۔ بلوچستان میں پرامن سیاسی جدوجہد کی اجازت تو دور کی بات اب طاقت کے زور پر نمازجنازے پڑھنے کی بھی اجازت نہیں دیا جارہا۔
تربت میں کریمہ بلوچ کے آبائی علاقے تمپ میں موبائل نیٹ ورک اور آمد و رفت بند کردی گئی یے بلوچ قوم کے خلاف اس نفرت انگیز ذہینت کا مقصد قبضہ گیریت کی سوچ ہے کہ بلوچستان کو تمام اسلامی و بنیادی انسانی حقوق کے لئے ممنوعہ علاقہ بنا دیا گیا ہے۔
بلوچ دشمنی کی آڑ میں مکمل طور پر حواس باختہ ہوکر جنازہ روکا گیا جسکی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے اسطرح کے منفی اقدامات سے بجائے بلوچستان کے سیاسی مسئلے کو حل کرنے کی مزید پیچیدہ پیدا کر کے صرف طاقت کے زور پر بلوچ قوم کو مزید ظلم کا شکار بنایا جارہا ہے ۔ظلم و طاقت کے استعمال سے بلوچ قوم کو کسی صورت زیر نہیں کیا جاسکتا ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

error: Content is protected !!