مشترکہ احتجاج نے ثابت کردیا بلوچ قوم طاقت کے زور پر مظالم کو قبول نہیں کرے گی

Spread the love

کوئٹہ(پ ر) بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن کے مرکزی چیئرمین نزیر بلوچ نے کہا ہے حیات بلوچ کے قربانی سے بلوچ سیاسی جدوجہد و شعور آواز بلند کرنے کے لئے ایک نئی طاقت پیدا ہوچکی یے 22 اگست کو بلوچ طلباء تنظیموں کے مشترکہ احتجاج نے ثابت کردیا بلوچ قوم طاقت کے زور پر مظالم کو قبول نہیں کرے گی حیات بلوچ کو انصاف فراہمی کے احتجاج کے بعد بلوچ دشمنی و بلوچ طلباء کے خلاف نفرت میں مزید تیزی لائی گئی ہے پرامن احتجاج کو طاقت کے زور پر غداری و وفاداری کے القابات سے نوازنے و اصل ایشو سے توجہ ہٹانے کی کوشش کی جارہی ہے ایسے واقعات کے روک تھام کے لئے نوآبادیاتی زہنیت کا خاتمہ ہے بلوچ قوم کو تیسرے درجے کے شہری کے طور پر رکھ کر محض وسائل کو لوٹا گیا و طاقت کا استعمال کرکے بنیادی انسانی حقوق پر قدغن لگائی گئی بلوچ قوم کے خلاف بڑے پیمانے پر ایک دفعہ پھر نسل کشی کا سلسلہ شروع کی گئی جسکا مقصد پرامن سیاسی کارکنوں بلخصوص نوجوانوں کو خاموش کرنا ہے بی ایس او نے ہمیشہ پرامن جدوجہد کے زریعے قومی حقوق کو اجاگر کرنے کی کوشش کی ہے آج کامیاب احتجاجی کال پر بلوچستان سمیت دیگر شہروں کے انسانی حقوق کے کارکنوں و طلباء تنظیموں کا شکریہ ادا کرتے ہے کہ انہوں نے بلوچ کے درد پر آواز بلند کیا اور حیات بلوچ کو انصاف کے فراہمی کے لئے ہمارے ہم آواز بنے ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

error: Content is protected !!