وائس چانسلر جاوید اقبال اور انکے گروہ پر مقدمہ قائم کر کے کریمنل کورٹ میں ٹرائل کیا جائے : بی ایس او

Spread the love

کوئٹہ(نشست) بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن کے مرکزی ترجمان نے جاری کردہ بیان میں کہا ہے جامعہ بلوچستان جنسی ہراسگی اسکینڈل کو جامعہ بلوچستان سینڈیکیٹ کے زریعے اصل ملزمان کو بچانے کی کوشش کی جارہی ہے اسکینڈل میں ملوث ملزمان سابقہ وائس چانسلر جاوید اقبال اور انکے گروہ پر مقدمہ قائم کے کریمنل کورٹ میں ٹرائل کیا جائے تاکہ انصاف کے تقاضے پورا ہو محض تمام واقعے کی زمہ داری ایک نچلے گریڈ کے ملازم پر ڈالنا طاقت ور ملوث عناصر کو بچانے کی کوشش ہے جسے کسی صورت قبول نہیں کیا جاسکتا صرف ایک نچلے گریڈ کا ملازم اس سارے واقعے کی زمہ دار نہیں ہوسکتا اس میں سابقہ وائس چانسلر انکے گرد آفسران کا گروہ اس میں براہ راست ملوث تھی جوکہ اب بھی یونیورسٹی میں اہم زمہ داریوں پر فائز ہے انہوں نے مزید کہا کہ سابقہ وائس چانسلر کے دور میں اخلاقی کرپشن کے ساتھ بھرتیوں داخلوں اسکالرشپس اور امتحانات میں بھی کرپشن کی گئی بغیر کسی قانونی تقاضے پورے کرنے کے گریڈ سترہ کے لوگوں کو بیک جنبش قلم گریڈ 21 پر ترقی دی گئی جبکہ یہی سلسلہ تمام امور میں جاری رہا ہے عدالتی کاروائی میں تمام ملوث لوگوں کے خلاف کاروائی اور کریمنل ٹرائل کیا جائے جاوید اقبال کے دور میں اہم عہدوں پر آفسران کو شامل تفتیش کیا جائے تو اصل حقائق سامنے آئنگے سینڈیکیٹ جوکہ صرف کرپشن کو قانونی ظاہر کرنے کا ایک زریعہ بنایا جا چکا ہے اسکے کسی فیصلے پر اعتماد نہیں عدالتی کاروائی کی جائے

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

error: Content is protected !!