یونین کونسل پلنتاک میں صحت کا ناقص نظام

Spread the love

تحریر:ڈاکٹر میر احمد بلوچ

جب جولائی 2005 کو واشک کو ضلع خاران سے الگ کر کے ضلعے کی حیثیت دی گئی تو یہاں کی عوام میں امید کی ایک نئی کرن روشن ہوئی اور انہوں نے سمجھا کہ اب ہماری تقدیر بدلنے والی ہے_ لیکن ان بے چاروں کو کیا پتا تھا کہ یہ بد نصیب ضلع, ضلعے کا درجہ ملنے کے پندرہ سال بعد بھی بنیادی سہولیات سے محروم ہے رہے گا_ اور 2018 میں یو این او کی ایک رپورٹ اسے دنیا کا غریب ترین ضلع قرار دے گی_ پلنتاک ضلع واشک کا ایک یو سی ہے جسکی آبادی بمشکل تین ہزار نفوس پر مشتمل ہے_ اور یہاں کے باسی اکیسویں صدی میں بھی تمام بنیادی سہولیات سے محروم ہیں_ تعلیم کی شرح 0 فیصد ہے_ بجلی اور دیگر سہولتیں تو درکنار یہاں کے مکینوں کو صاف پانی تک میسر نہیں ہے_ پلنتاک کا سب سے بڑا مسئلہ صحت کا ہے_ یہاں ایک چھوٹا سا ہسپتال ہے اور صرف دو ڈسپنسر تعینات ہیں_ لیکن ان کے پاس نہ وافر مقدار میں ادویات موجود ہیں اور نہ انہیں کوئی خاصی تربیت دی جاتی ہے_ اور سب سے دلچسپ بات یہ ہے کہ یہاں ایک ایم بی بی ایس لیڈی ڈاکٹر بھی متعین ہےجس کا نام نیلوفر ہے_ لیکن موصوف کا نام بہت کم لوگ جانتے ہیں جس کی وجہ یہ ہے کہ جب سے ڈاکٹر صاحبہ کی پلنتاک میں پوسٹنگ ہوئی ہے انہوں نے پلنتاک کے ہسپتال کا منہ تک نہیں دیکھا ہے_ اور ایک بار وزٹ بھی نہیں کیا ہے_ اور کراچی یا اپنے آبائی علاقہ کوئٹہ میں بیٹھ کر تنخواہ وصول کر رہی ہے_ کیوں کہ اسے پتا ہیکہ نہ اسے ڈی ایچ او پوچھتا ہے اور نہ علاقے کا کوئی معتبر اس حوالے سے سنجیدگی کا مظاہرہ کرتا ہے_ اور درمیان میں بے چارے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا ہے_ اور یہاں کے رہائشی ایک معمولی بیماری مثلا سردرد یا نزلہ زکام کے علاج کےلئے پنجگور, واشک یا خاران کا رخ کرنے پر مجبور ہوتے ہیں_ لہذا ہم اہل پلنتاک حکام بالا بالخصوص ڈی ایچ او واشک ڈی ایس ایم واشک اور ایم پی اے و ایم این اے سے دست بستہ اپیل کرتے ہیں کہ ڈاکٹر نیلوفر کے خلاف جلد ازجلد قانونی کارروائی کی جائے اور اس کا فوری تبادلہ کیا جائے_ اور آخر میں, میں یہ واضح کرنا چاہتا ہوں کہ میرے پاس میڈیکل ٹیکنیشن(ایم ٹی) کا ڈپلومہ موجود ہے اور میں پلنتاک کا مقامی باشندہ ہوں_ لہذا حکومت سے درخواست کرتا ہوں کہ مجھے ترجیح دی جائے تاکہ مجھے اپنے علاقے کی عوام کی خدمت کا بہتر سے بہتر موقع فراہم ہوسکے

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

error: Content is protected !!