بنیادی صفحہ / اردو / علامہ صاحب ،فیسبکی نوجوان اور میڈیکل سائنس کی تکرار

علامہ صاحب ،فیسبکی نوجوان اور میڈیکل سائنس کی تکرار

تحریر:احمد علی کورار

 

یہ تو ہمارے فیس بکی نوجوانوں کی خارج العقلی ہے کہ وہ ہمہ وقت علامہ صاحب کی باتوں کا ٹھٹھا کرتے ہیں لیکن ایک اور طبقہ ہے جو علامہ
صاحب کو مشاہیر علم ودانش گردانتا ہے۔ان کو علامہ کی فہم و فراست سے کوئی مفر نہیں کیونکہ علامہ صاحب نے اپنی دا نشوری سے دقیق سے دقیق مسائل کا حل ان کے سامنے پیش کرتے ہیں۔

اب یہ ان کی کوتاہ نظری ہے کاہلی ہے. کہ وہ اس پر عمل نہیں کرتے۔
علامہ صاحب گفتار کے دھنی ہیں۔ علامہ کو باتیں جھاڑتے وقت  دنیا کے کسی بھی مشاہیر علم ودانش سے خوف نہیں ہوتا لیکن انھیں فیس بکی نوجوانوں کا خوف طاری ہوتا ہے کہ میری اس اہم بات کا پھر کل سوشل میڈیا پہ مذاق نہ بنایا جائے ۔
وہ بعض اوقات طیش میں آکر ان نوجوانوں کو ایسے ایسے استعارات سے جوڑتے ہیں  مگر نوجوانوں کا اس پر کیااثر ہونا! یہ فیسبکی نوجوانوں کہاں سدھرنے والے ہیں۔

علامہ صاحب منبرپر بیٹھے ہوئے ایسے ایسے واقعات تمام کر جاتے ہیں عقل دنگ رہ جاتی ہے اور نیچے بیٹھے لوگوں کے تائیدی فقرے مزید سوچنے پر مجبور کر دیتے ہیں بعض تو علامہ کو خراج ِعقیدت پیش کرنے کے لیے اٹھ کھڑے ہوتے ہیں علامہ مزید جوش میں آجاتے ہیں 
علامہ کے دلچسپ واقعات میں نیپال کا قصہ  جس نے محو حیرت میں ڈال دیا   جس پر سوشل میڈیا پر ٹھٹھوں کا بازار سجا اس کی Justification میں مولانا نے لڈن جعفری کا واقعہ گوش گزار کیا لیکن یہ فیسبکی کہاں ماننے والے۔

 

علامہ کی فراست کے کیا کہنے لفظ جناح کی ویکیپیڈیا پھر پاکستان کے قیام کو بھی اسی کا موجب قرار دیتے ہیں واہ واہ کے تائیدی فقرے علامہ کے جوش خطابت کو مزید کاٹ دار بنا دیتے ہیں۔

 

کبھی کبھی ہم جیسے نالائقوں کو سی ایس ایس کرنے اور مختلف کتب پڑ ھنے کے موثر طریقے بتاتے ہیں اور یہ بھی بتاتے ہیں کہ سی ایس ایس کرنے سے بندہ ڈی سی ڈی آئی جی بن جاتا ہے۔دنیا جہاں کی کتابیں پڑھنے کا مشورہ دیتے ہیں۔

 

لیکن کم بخت فیسبکی نوجوان اتنی سنجیدہ بات کو بھی مضحکہ خیز بنا دیتے ہیں۔
پھر علامہ فیس بک پہ آکے  فیس بک سمیت اس فیس بکی نوجوان گروہ کو کوستے ہیں یہ فیس بکی نوجوان سدھرنے والے نہیں۔

 

کرہ ارض پر نازل ہونی والی بلائے ناگہانی کرونا نے پورے نظام کو تلپٹ کر دیا ہے اس کی بیخ کنی کے لیے  دنیا کی سینکڑوں لیبارٹیریز میں ویکسین کی تیاری پر کام ہو رہا ہے  سائنسدان دن رات کرونا کش ویکسین تیار کرنے میں اپنی تمام تر صلاحیتیں بروئے کار لاتے ہیں۔ 

لیکن ایسے میں گزشتہ دنوں علامہ صاحب سکرین پہ نمودار ہوکے یہ اعلان کر تے ہیں کہ میں نے کرونا کش چیز تیار کر لی ہے اور علامہ صاحب یہ بھی دعوی کرتے ہیں کہ پلازمہ والی بات سب سے پہلے میں نے کی تھی جب اینکر ان سے پوچھتا ہے کہ وہ دوائی اور اس کا طریقہ کار بتا دیں علامہ انکار کر دیتے ہیں کہ ابھی نہیں بتاوں گا اور اتنی آسانی سے نسئخہ کیمیا بتاتے بھی کیسے؟ البتہ اس اینکر کو یقین دہانی کروائی کہ جب وہ ان کے ہاں آئیں گے وہ یہ نسخہ اس کو کھلا دیں گے صرف کرونا ہی تمام بلائے ناگہانی سے بچ جاو گے۔

 

ان کم بخت فیسبکی نوجوانوں کی وجہ سے علامہ صاحب نسخہ نہیں بتا رہے ہمارے ہاں کیسے کیسے گوہر موجود ہیں دنیا کے میڈیکل سائنس محو حیرت ہے حواس باختہ ہے کہ کیا کیا جائے۔

 لیکن ہمارے علامہ صاحب کی فہم و فراست دیکھیے  انھوں نے کرونا کا علاج بھی دریافت کر لیا اس لیے چھپائے بیٹھے ہیں کم بخت فیس بکی نوجوان ماننے کو تیار نہیں۔

اسی پروگرام میں علامہ صاحب نے میڈیکل کا بڑا مسلہ حل کر دیا جس پر سائنس عشروں سے سر کھپاتی رہی۔

علامہ صاحب نے بچوں میں معذوری کی وجہ بتاتے ہوئے فرمایا کہ  حمل  سے زچکی تک خواتین شوہر کے علاوہ غیر مردوں کو نہ دیکھیں۔

علامہ صاحب نے اسے مزید Justify کرنے کے لیے ایک مثال دیاب سائنسی خبر سنیے! ایک گورے جوڑے کے ہاں کالا لڑکا پیدا ہو گیا۔ یہ میں سائنس کی بات بتا رہا ہوں۔  تو بھئی سب کو بڑی حیرانی ہوئی کہ گورے ماں باپ کے ہاں کالا یعنی نیگرو کیسے پیدا ہوا۔ جب ریسرچ کی گئی تو پتہ یہ چلا کہ ایک کیلنڈر پہ نیگرو کی تصویر ٹنگی ہوئی تھی اس کمرے میں جہاں ہونے والی ماں سوتی تھی۔  صبح جب وہ اٹھتی تھی تو اٹھتے ساتھ ہی وہ تصویر دیکھتی تھی تو اس کے اثرات کی وجہ سے بچہ کالا پیدا ہوا۔

 

اگر اب بھی یہ فیس بکی نوجوان ٹھٹھے بازی سے باز نہ آئے تو علامہ ان کم بختوں کی وجہ سے اپنا علم چھپاتے رہیں گی ہمیں پھر طبی معاملات میں گوروں کی طرف دیکھنا پڑے گا۔پھر یہ تو ہو گا۔

تعارف: nishist_admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

x

Check Also

ایک شعوری سوال

تحریر : عامر نذیر بلوچ   کائنات میں ہمیشہ سے روایات چلتا ...

مختلف سوچ اقوام کی مضبوطی کا سبب ہے

تحریر: نعیم قذافی   انسان جسم و قد، رنگ یا دیگر اعتبار ...

چلو آو بیٹا افطاری کرتے ہیں

افسانہ نگار: شاد بلوچ امی، امی، امی… نوید کی چیخیں نکل رہے ...

اردو اور کھیترانی

  تحریر ۔ جان گل کھیتران بلوچ اردو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کھیترانی کیا حال ...

سیو اسٹوڈنٹس فیوچر کے نو منتخب وائس چیئرمین کی حلف برداری

سیو اسٹوڈنٹس فیوچر (ایس ایس ایف) کے نو منتخب وائس چیئرمین کی ...

error: Content is protected !!